بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

نکاح نامہ میں غلط عمر لکھوانا

نکاح نامہ میں غلط عمر لکھوانا

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام مندرجہ ذیل  مسئلہ کے بارے میں کہ لڑکے والوں نے لڑکی والوں کو اور لڑکی کو پسند کر لیا ہے،کہ یہ رشتہ مناسب ہے ،اسی طرح لڑکی والوں نےلڑکے والوں کو اور لڑکے کو پسند کرلیا ہے اور استخارہ بھی کر لیا ہے ،کہ رشتہ مناسب ہے، لڑکی کی عمر ساڑھے سترہ سال ہے ،لڑکی والوں کا کہنا ہے کہ جب لڑکی کی عمر اٹھارہ سال ہوجائے گی،تو ہم نکاح اور رخصتی ایک ساتھ کر دیں گے ،لڑکے والوں کا اصرار ہےکہ نکاح ابھی کر دیا جائے اور نکاح نامہ میں عمر اٹھارہ سال لکھ دی جائے ،آپ بتائیں کہ کیا ایسا کرنا درست ہے؟

جواب 

صورت مسئولہ میں نکاح تو ابھی کرنے میں حرج نہیں ہے، البتہ اس میں عمر غلط لکھوانا جائز نہیں۔     

لما في صحيح البخاري :

”عن هِشَامٍ عَنْ أَبِيهِ قال : ”توفيت خديجة قبل مخرج النبي صلى الله عليه و سلم إلى المدينة بثلاث سنين،فلبث سنتين أو قريبا من ذلك ونكح عائشة وهي بنت ست سنين ،ثم بنى بها وهي بنت تسع سنين“.(كتاب المناقب،باب تزويج النبي صلى الله عليه و سلم عائشة وقدومها المدينة وبنائه بها،رقم الحديث:3894،ص:655،ط:دارالسلام )

وفي الصحيح لمسلم:

”عن عائشة قالت:تزوجها رسول الله صلى الله عليه وسلم وهي بنت ست،وبنى بها وهي بنت تسع،ومات عنها وهي بنت ثمان عشرة“.

(كتاب النكاح،باب تزويج الأب البكر الصغيرة، رقم الحديث:3482،ص:598،ط: دارالسلام )

وفي سنن أبي داؤد:

”عن أبى وائل عن عبد الله قال:قال رسول الله -صلى الله عليه وسلم-: إياكم والكذب،فإن الكذب يهدى إلى الفجور،وإن الفجور يهدى إلى النار،وإن الرجل ليكذب ويتحرى الكذب حتى يكتب عند الله كذابا“.(كتاب الأدب،باب التشديد في الكذب، رقم الحديث:4989،ص:702،ط: دارالسلام ). فقط واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء جامعہ فاروقیہ کراچی

فتوی نمبر: 174/221