بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے جسم مبارک کا سایہ تھا

نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کے جسم مبارک کا سایہ تھا

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام مندرجہ ذیل  مسئلہ کے بارے میں کہ حضور اقدس صلی اﷲ علیہ وسلم کے جسدمبارک کا سایہ تھا، یا نہیں؟ہم ساتھیوں میں بہت اختلاف ہے ،بعض کہتے ہیں کہ جسد مبارک کا سایہ تھا ،اور بعض کہتے ہیں کہ نہیں تھا۔ جواب تفصیل  سے عنایت فرمائیں؟

جواب

حدیث شریعت سے معلوم ہوتا ہے کہ نبی صلی اﷲ علیہ وسلم کے جسد مبارک سایہ تھا۔ جس حدیث سے سایہ کے نہ ہونے کا پتہ چلتا ہے۔ محدثین نے اس کی تضعیف کی ہے۔
''عنْ صفِیّة بِنْتِ حُیَیٍّ أَنَّ النَّبِیَّ صَلَّی اللَّہُ عَلَیْہِ وَسَلَّمَ حَجَّ بنسَائه ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔فَلَمَّا کَانَ شہر رَبِیعٍ الْأَوَّلِ دَخَلَ عَلَیْہا فَرَأَتْ ظلَّه فَقَالَتْ إِنَّ هذَا لَظلّ رَجُلٍ.''(مسند أحمد بن حنبل، من حدیث صفیۃ أم المؤمنین ٤٧٥/٥، دارا الاحیاء التراث)۔ فقط واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء جامعہ فاروقیہ کراچی