بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

فجر کی سنتیں اول وقت میں پڑھنا افضل ہے یا فرضوں سے متصل

فجر کی سنتیں اول وقت میں پڑھنا افضل ہے یا فرضوں سے متصل

سوال

کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام مندرجہ ذیل  مسئلہ کے بارے میں کہ صبح کی دو رکعت سنتیں اول وقت میں پڑھنا افضل ہے،یا نماز کے متصل پڑھنا افضل ہے،فتاوٰی تاتارخانیہ میں اول وقت میں پڑھنا افضل لکھا ہے، جبکہ دیگر بعض فتاوٰی میں نماز کےمتصل پڑھنا  افضل لکھا ہے ۔

جواب 

راجح قول کے مطابق فجرکی  سنتیں اول وقت میں پڑھنا  افضل ہے۔

لما في خلاصة الفتاوى:"والسنةفي ركعتي الفجر ثلاث:أحدهما:أنه يقرء في الركعةالأولى"قل ياأيهاالكافرون،"وفي الثانية:"الإخلاص"والثانية:أنه يأتي بهمافي أول الوقت، والثالثة:أن يأتي بهمافي بيته".(كتاب الصلاة،الفصل في فرائض الصلاةوواجباتهاوسننها:1/51،رشيدية)

وفي الفتاوى الهندية:"والسنةفي ركعتي الفجر ثلاث:أحدهما:أنه يقرء في الركعةالأولى" قل ياأيهاالكافرون،"وفي الثانية:"الإخلاص"والثانية:أنه يأتي بهمافي أول الوقت،والثالثة:أن يأتي بهمافي بيته".(كتاب الصلاة،الباب التاسع:في النوافل:1/171،دارالفكر). فقط واللہ اعلم بالصواب

دارالافتاء جامعہ فاروقیہ کراچی

فتوی نمبر: 175/31،33