جامعہ فاروقیہ کراچی ۔۔ انٹرنیشنل اسلامک یونی ورسٹی

ہر مسلمان کے لئے دین سیکھنے کی فضیلت

مولانا محمد منظور نعمانی

بھائیو! اتنی بات تو آپ سب جانتے ہوں گے کہ اسلام کسی قوم اور ذات برادری کا نام نہیں ہے کہ اس میں پیدا ہونے والا ہر آدمی آپ سے آپ مسلمان ہو اور مسلمان بننے کے لئے اس کو کچھ نہ کرنا پڑے۔ جس طرح شیخ یا سید خاندان میں پیدا ہونے والا ہر بچہ خود بخود شیخ یا سید ہو جاتا ہے اور اس کو شیخ یا سید بننے کے لئے کچھ کرنا نہیں پڑتا۔

بلکہ اسلام نام ہے اس دین کا اور اس طریقے پر زندگی گزار نے کا جو اللہ کے سچے رسول ﷺ اللہ تعالیٰ کی طرف سے لائے تھے اور جو قرآن شریف میں اور رسول اللہ ﷺ کی حدیثوں میں بتلایا گیا ہے۔ پس کوئی اس دین کو اختیار کرے، اور اس طریقے پر چلے وہی اصلی مسلمان ہے اور جو لوگ نہ اس دین کو جانتے ہیں اور نہ اس پر چلتے ہیں وہ اصلی مسلمان نہیں ہیں۔

پس معلوم ہوا کہ اصلی مسلمان بننے کے لیے دو باتوں کی ضرورت ہے۔

ایک یہ کہ ہم دین اسلام کو جانیں اور کم از کم اس کی ضرورت اور بنیادی باتوں کا ہمیں علم ہو۔ دوسرے یہ کہ ہم ان کو مانیں اور ان کے مطابق چلنے کا فیصلہ کریں۔
اسی کا نام اسلام ہے اور مسلمان ہونے کا یہی مطلب ہے۔پس اسلام کا علم حاصل کرنا ، یعنی دین کی ضروری باتوں کا جاننا مسلمان ہونے کی سب سے پہلی شرط ہے۔ اسی لئے حدیث شریف میں آیا ہے۔

طَلَبُ الْعِلْمِ فَرِیْضَةٌ عَلیٰ کُلِّ مُسْلِمٍ (ابن ماجہ و بیہقی)
یعنی علم دین حاصل کرنے کی کوشش اور طلب ہر مسلمان پر فرض ہے۔

اور یہ بات ہمیشہ یادرکھنے کی ہے کہ دین میں جو چیز فرض ہے اس کا کرنا عبادت ہے ۔ اس لئے دین سیکھنا اور دینی باتیں جاننے کی کوشش کرنا بھی عبادت ہے اور اللہ کے یہاں اس کا بہت بڑا ثواب ہے ۔ اور رسول اللہ ﷺنے اس کی بڑی بڑی فضیلتیں بیان فرمائی ہیں۔ ایک حدیث میں ہے کہ:
جو شخص دین سیکھنے کے لئے اپنے گھر سے نکلے وہ جب تک اپنے گھر واپس نہ آئے وہ الله کے راستے میں ہی۔ (ترمذی)

ایک اور حدیث میں ہے کہ:
جو شخص دین کی طلب اور دینی باتیں سیکھنے کے لئے کسی راستے پر چلے گا تو الله تعالیٰ اس کے لئے جنت کا راستہ آسان کر دے گا۔ (مسلم)

ایک اور حدیث میں ہے کہ:
علم دین کی طلب اور اس کے حاصل کرنے کی کوشش کرنا پچھلے گناہوں کا کفارہ ہے۔( یعنی اس سے آدمی کے پچھلے گناہ معاف ہو جاتے ہیں)۔ (ترمذی)

الغرض دین کا سیکھنا اور اسلام کی ضروری باتوں کا علم حاصل کرنے کی کوشش کرنا ہر مسلمان پر فرض ہے۔ چاہے وہ امیر ہو یا غریب، جوان ہو یا بوڑھا ،پڑھا لکھا ہو یا ان پڑھ، مرد ہو یا عورت اور اوپر کی حدیثوں سے یہ معلوم ہو چکا ہے کہ اس کام میں وقت لگتا ہے اور اس کے لئے جو محنت کرنی پڑتی ہے، الله تعالیٰ کے یہاں اس کا بڑا اجر و ثواب ملنے والا ہے۔ اس لئے ہم سب کو طے کر لینا چاہے کہ ہم دین سیکھنے کی اور اسلام کی ضروری باتوں کا علم حاصل کرنے کی ضرور کوشش کریں گے۔

جو مسلمان بھائی عمر زیادہ ہو جانے کی وجہ سے یا کام کاج کی مشغولیت کی وجہ سے کسی اسلامی مدرسہ میں داخل ہو کر اور باقاعدہ اس کا طالب علم بن کر دین کا علم حاصل نہیں کر سکتے، ان کے لئے دین سیکھنے اور دین کی ضروری باتیں معلوم کرنے کا آسان راستہ یہ ہے کہ اگر وہ پڑھے لکھے ہیں تو دین کی معتبر کتابیں دیکھا کریں اور جو پڑھے لکھے نہیں ہیں یا بہت کم پڑھے ہیں وہ اچھے پڑھے لکھوں سے ایسی کتابیں پڑھوا کر سنا کریں۔ اگر گھروں میں بیٹھکوں میں، مجمعوں میں مسجدوں میں ایسی کتابیں پڑھنے اور سننے کا رواج ہو جائے تو ہر طبقے کے مسلمان میں دین کا علم عام ہو سکتا ہے۔

اس بارے میں مزید صفحات بہت جلد اپ لوڈ کئے جائیں گے۔ انشاء اللہ۔



English
عربي

ابتداء
اپنے بارے میں
جامعہ فاروقیہ
الفاروق
اسلام
قرآن
کتب خانہ
منتحب سائٹس
This site is developed under the guidance of eminent Ulamaa of Islam. 
Suggestions, comments and queries are welcomed at info@farooqia.com
ابتداء  |  اپنے بارے میں  |  جامعہ فاروقیہ  |  الفاروق  |  اسلام  |  قرآن  |  کتب خانہ  |  منتخب سائٹس
No Copyright Notice.
All the material appearing on this web site can be freely distributed for non-commercial purposes. However, acknowledgement will be appreciated.